Faiz

گہے وصال تھا جس سے تو گاہ فرقت تھی​
وہ کوئی شخص نہیں تھا وہ ایک حالت تھی​

وہ بات جس کا گلہ تک نہیں مجھے ‘ پر ہے​
کہ میری چاہ نہیں تھی ‘ مری ضرورت تھی​

وہ بیدلی کی ہوائیں چلیں کہ بھول گئے​
کہ دل کے کون سے موسم کی کیا روایت تھی​

نہ اعتبار‘ نہ وعدہ ‘ بس ایک رشتہء دید​
میں اس سے روٹھ گیا تھا عجیب ہمت تھی​

گمانِ شوق‘ وہ محمل نظر نہیں آتا​
کنارے دشت وہی تو بس اک عمارت تھی​

حسابِ عشق میں آتا بھی کس حسین کا نام​
کہ ہر کسی میں کسی اور کی شباہت تھی​

Leave a comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *